منتديات فرسان المعرفة

أهلا وسهلا زائرنا الكريم ومرحبا بك في منتديات فرسان المعرفة منتديات التميز والابداع ونتمنى أن تكون زيارتك الأولى مفتاحا للعودة إليه مرة أخرى والانضمام إلى أسرة المنتدى وأن تستفيد إن كنت باحثا وتفيد غيرك إن كنت محترفا

انضم إلى المنتدى ، فالأمر سريع وسهل

منتديات فرسان المعرفة

أهلا وسهلا زائرنا الكريم ومرحبا بك في منتديات فرسان المعرفة منتديات التميز والابداع ونتمنى أن تكون زيارتك الأولى مفتاحا للعودة إليه مرة أخرى والانضمام إلى أسرة المنتدى وأن تستفيد إن كنت باحثا وتفيد غيرك إن كنت محترفا

منتديات فرسان المعرفة

هل تريد التفاعل مع هذه المساهمة؟ كل ما عليك هو إنشاء حساب جديد ببضع خطوات أو تسجيل الدخول للمتابعة.

منتديات الشمول والتنوع والتميز والإبداع

قال تعالى ( يا أيها الذين أمنوا اذكروا الله كثيراً وسبحوه بكرة وأصيلا)أ
عن أنس بن مالك عن النبي صلى الله عليه وسلم قال(من قال صبيحة يوم الجمعة قبل صلاة الغداة , أستغفر الله الذي لا إله إلا هو الحي القيوم وأتوب إليه ثلاث مرات غفرالله ذنوبه ولو كانت مثل زبد البحر)
عن أبي بردة بن أبي موسى الأشعري، عن أبيه، عن النبي صلى الله عليه وسلم؛ أنه كان يدعو بهذا الدعاء "اللهم! اغفر لي خطيئتي وجهلي. وإسرافي في أمري. وما أنت أعلم به مني. اللهم! اغفر لي جدي وهزلي. وخطئي وعمدي. وكل ذلك عندي. اللهم! اغفر لي ما قدمت وما أخرت. وما أسررت وما أعلنت. وما أنت أعلم به مني. أنت المقدم وأنت المؤخر. وأنت على كل شيء قدير". رواه مسلم في صحيحه برقم (2719)
عن عقبة بن عامر رضى الله عنه قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم (ما أحد يتوضأ فيحسن الوضوء ويصلي ركعتين يقبل بقلبه ووجهه عليهما إلا وجبت له الجنة)رواه مسلم وأبو داود وابن ماجة وابن خزيمة في صحيحة
عن أبي هريرة رضى الله عنه قال: كان رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول "اللهم! أصلح لي ديني الذي هو عصمة أمري. وأصلح لي دنياي التي فيها معاشي. وأصلح لي آخرتي التي فيها معادي. واجعل الحياة زيادة لي في كل خير. واجعل الموت راحة لي من كل شر". رواه مسلم في صحيحه برقم (2720)
عن أبي الأحوص، عن عبدالله رضى الله عنه، عن النبي صلى الله عليه وسلم؛ أنه كان يقول "اللهم! إني أسألك الهدى والتقى، والعفاف والغنى". رواه مسلم في صحيحه برقم(2721)
عن زيد بن أرقم رضى الله عنه. قال: لا أقول لكم إلا كما كان رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول: كان يقول "اللهم! إني أعوذ بك من العجز والكسل، والجبن والبخل، والهرم وعذاب القبر. اللهم! آت نفسي تقواها. وزكها أنت خير من زكاها. أنت وليها ومولاها. اللهم! إني أعوذ بك من علم لا ينفع، ومن قلب لا يخشع، ومن نفس لا تشبع، ومن دعوة لا يستجاب لها". رواه مسلم في صحيحه برقم(2722)
عن عبدالله رضى الله عنه قال: كان نبي الله صلى الله عليه وسلم إذا أمسى قال "أمسينا وأمسى الملك لله. والحمد لله. لا إله إلا الله وحده لا شريك له". قال: أراه قال فيهن "له الملك وله الحمد وهو على كل شيء قدير. رب! أسألك خير ما في هذه الليلة وخير ما بعدها. وأعوذ بك من شر ما في هذه الليلة وشر ما بعدها. رب! أعوذ بك من الكسل وسوء الكبر. رب! أعوذ بك من عذاب في النار وعذاب في القبر". وإذا أصبح قال ذلك أيضا "أصبحنا وأصبح الملك لله". رواه مسلم في صحيحه برقم(2723)
عن عبدالرحمن بن يزيد، عن عبدالله رضى الله عنه . قال: كان رسول الله صلى الله عليه وسلم إذا أمسى قال "أمسينا وأمسى الملك لله. والحمد لله. لا إله إلا الله وحده. لا شريك له. اللهم! إني أسألك من خير هذه الليلة وخير ما فيها. وأعوذ بك من شرها وشر ما فيها. اللهم! إني أعوذ بك من الكسل والهرم وسوء الكبر. وفتنة الدنيا وعذاب القبر". رواه مسلم في صحيحه برقم(2723)
عن أبي موسى رضى الله عنه أن النبي صلى الله عليه وسلم قال (مثل الذي يذكر ربه والذي لا يذكره مثل الحي والميت) رواه البخاري.
قال رسول الله صلى الله عليه وسلم(سبعة يظلهم الله في ظله يوم لا ظل إلا ظله: إمام عادل وشاب نشأ في عبادة الله, ورجل قلبه معلق بالمساجد إذا خرج منه حتى يعود إليه, ورجلان تحابا في الله اجتمعا عليه وتفرقا عليه, ورجل تصدق بصدقة فأخفاها حتى لا تعلم شماله ما تنفق يمينه, ورجل دعته امرأة ذات منصب وجمال فقال إني أخاف الله , ورجل ذكر الله خالياً ففاضت عيناه) متفق عليه
عن أبى هريرة رضى الله عنه أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال ( كلمتان خفيفتان على اللسان ثقيلتان في الميزان حبيبتان إلى الرحمن سبحان الله وبحمده سبحان الله العظيم ) روه الشيخان والترمذي.
عن أبي مالك الحارث بن عاصم الأشعري رضى الله عنه قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم(الطهور شطر الإيمان والحمدلله تملأ الميزان وسبحان الله والحمدلله تملأ أو تملآن ما بين السماء والأرض والصلاة نور والصدقة برهان والصبر ضياء والقرآن حجة لك أو عليك كل الناس يغدو فبائع نفسه أو موبقها) رواه مسلم. وقال رسول الله صلى الله عليه وسلم(من قال سبحان الله وبحمده في يومه مائة مرة حُطت خطاياه ولو كانت مثل زبد البحر)رواه البخاري ومسلم.
عن أبي سعيد رضى الله عنه أن النبي صلى الله عليه وسلم قال ( استكثروا من الباقيات الصالحات ) قيل وما هن يارسول الله؟ قال ( التكبير والتهليل والتسبيح والحمدلله ولا حول ولاقوة إلابالله ) رواه النسائي والحاكم وقال صحيح الاسناد.
قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ( أحب الكلام إلى الله أربع- لا يضرك بأيهن بدأت: سبحان الله والحمدلله ولا إله إلا الله والله أكبر ). رواه مسلم

    حديث قدسي - تحريم الظلم

    alsaidilawyer
    alsaidilawyer
    مدير المنتدى
    مدير المنتدى


    الجنس : ذكر
    الابراج : الدلو
    عدد المساهمات : 4032
    نقاط : 80999
    السٌّمعَة : 2684
    تاريخ التسجيل : 01/03/2010
    العمر : 53
    الموقع : الجمهورية اليمنية - محافظة إب

    حديث قدسي - تحريم الظلم  Empty حديث قدسي - تحريم الظلم

    مُساهمة من طرف alsaidilawyer الجمعة 3 فبراير 2023 - 13:18

         
    عن أبي ذر الغفاري رضي الله عنه عن النبي صلى الله عليه وسلم فيما يرويه عن ربه: «يا عبادي، إني حرَّمتُ الظلمَ على نفسي وجعلتُه بينكم محرَّمًا فلا تَظَالموا، يا عبادي، كلكم ضالٌّ إلا من هديتُه فاستهدوني أَهْدَكِم، يا عبادي، كلكم جائِعٌ إلا من أطعمته فاستطعموني أطعمكم، يا عبادي، كلكم عارٍ إلا من كسوتُه فاسْتَكْسُوني أَكْسُكُم، يا عبادي، إنكم تُخطئون بالليل والنهار وأنا أغفر الذنوبَ جميعًا فاستغفروني أغفرْ لكم، ياعبادي، إنكم لن تَبلغوا ضَرِّي فتَضُرُّونِي ولن تَبْلُغوا نَفْعِي فتَنْفَعُوني، يا عبادي، لو أن أولَكم وآخِرَكم وإنسَكم وجِنَّكم كانوا على أتْقَى قلبِ رجلٍ واحد منكم ما زاد ذلك في ملكي شيئًا، يا عبادي، لو أن أوَّلَكم وآخِرَكم وإنسَكم وجِنَّكم كانوا على أفْجَرِ قلب رجل واحد منكم ما نقص ذلك من ملكي شيئًا، يا عبادي، لو أن أولكم وآخركم وإنسكم وجنكم قاموا في صَعِيدٍ واحد فسألوني فأعطيت كلَّ واحدٍ مسألتَه ما نقص ذلك مما عندي إلا كما يَنْقُصُ المِخْيَطُ إذا أُدخل البحر، يا عبادي، إنما هي أعمالكم أُحْصِيها لكم ثم أُوَفِّيكُم إياها فمن وجد خيرًا فليحمد الله ومن وجد غير ذلك فلا يلومن إلا نفسه».  
    [صحيح] - [رواه مسلم]


    الشرح
    يفيدنا هذا الحديث القدسي المشتمل على فوائد عظيمة في أصول الدين، وفروعه، وآدابه بأن الله سبحانه حرم الظلم على نفسه تفضلاً منه وإحساناً إلى عباده، وجعل الظلم محرمًا بين خلقه فلا يظلم أحد أحدًا، وأن الخلق كلهم ضالون عن طريق الحق إلا بهداية الله وتوفيقه، ومن سأل الله وفقه وهداه، وأن الخلق فقراء إلى الله محتاجون إليه، ومن سأل الله قضى حاجته وكفاه، وأنهم يذنبون بالليل والنهار والله تعالى يستر ويتجاوز عند سؤال العبد المغفرة، وأنهم لا يستطيعون مهما حاولوا بأقوالهم وأفعالهم أن يضروا الله بشيء أو ينفعوه، وأنهم لو كانوا على أتقى قلب رجل واحد أو على أفجر قلب رجل واحد ما زادت تقواهم في ملك الله، ولا نقص فجورهم من ملكه شيئًا؛ لأنهم ضعفاء فقراء إلى الله محتاجون إليه في كل حال وزمان ومكان، وأنهم لو قاموا في مقام واحد يسألون الله فأعطى كل واحد ما سأل ما نقص ذلك مما عند الله شيئاً؛ لأن خزائنه سبحانه ملأى لا تغيضها نفقة، سحاء الليل والنهار، وأن الله يحفظ جميع أعمال العباد ويحصيها ما كان لهم وما كان عليهم، ثم يوفيهم إياها يوم القيامة فمن وجد جزاء عمله خيرًا فليحمد الله على توفيقه لطاعته، ومن وجد جزاء عمله شيئا غير ذلك فلا يلومن إلا نفسه الأمارة بالسوء التي قادته إلى الخسران.  




    الإنجليزية
    Abu Dharr al-Ghifāri (may Allah be pleased with him) reported that the Prophet (may Allah's peace and blessings be upon him) said that Allah, the Almighty, said: "O My slaves, I have made oppression forbidden for Myself, and I have made it forbidden amongst you, so do not oppress one another. O My slaves, all of you are misguided except those whom I guide, so seek guidance from Me and I shall guide you. O My slaves, all of you are hungry except those whom I feed, so ask Me for food and I shall feed you. O My slaves, all of you are naked except those whom I clothe, so ask Me for clothes and I shall clothe you. O My slaves, you commit sins by night and by day and I forgive all sins, so ask Me for forgiveness and I shall forgive you. O My slaves, you can neither do Me any harm nor can you do Me any good. O My slaves, if the first and the last amongst you and all humans and Jinns were all as pious as the most pious heart of any individual amongst you, that would add nothing to My power and dominion. O My slaves, if the first and the last amongst you and all humans and Jinns were all as wicked as the most wicked heart of any individual amongst you, it would cause no loss to My power and dominion. O My slaves, if the first and the last amongst you and all humans and Jinn were all to stand together in one place and ask of Me, and I were to give everyone what he requested, then that would not decrease what I possess, except what is decreased of the sea when a needle is dipped into it. O My slaves, it is only your deeds that you will be held accountable for, then I shall recompense you for it. So, anyone finds good, let him praise Allah, and anyone finds other than that, let him blame no one but himself.”    


    Sahih/Authentic. - [Muslim]


    الشرح
    This Qudsi Hadīth teaches many lessons regarding the fundamentals of religion, its branches as well as its manners. It states that Allah, the Almighty, has prohibited oppression for Himself out of His bounty and kindness towards His slaves. Also, He has made oppression forbidden amongst His creatures, so that no one should oppress anyone. The Hadīth states that all creatures will not be find the right path except by the guidance of Allah and His success. Anyone requests guidance from Allah will be granted guidance and success. All creatures are in desperate need of Allah in everything, so whoever asks Allah for something, He will give it to him and suffice him. Human beings commit sins night and day; yet, Allah conceals and pardons them once they ask for His forgiveness. They can never harm or benefit Allah no matter what they do or what they say. If all of them are as pious as the most pious heart of any individual among them, or as wicked as the most wicked heart of any individual among them, this will neither add nor decrease anything of the dominion of Allah because they are weak and in need of Allah in all circumstances and at all times. If they gathered together in one place and they all asked Allah what they wanted, and Allah gave everyone what they asked for, this would not decrease what is stored with Him in any way. This is because the depositories of Allah are full and not the least affected by continuous giving. Allah preserves and records all good and evil deeds of His slaves, and He will recompense them for such deeds on the Day of Judgment. So, anyone finds the reward of his deeds to be good, then he should praise and thank Allah for guiding him to be obedient to Him. On the other hand, anyone finds the reward of his deeds other than that, then he should not blame anyone except his soul that enjoined him to do evil and brought him to loss.    


    The Sunnah also contains speech of Allah Almighty. This is what the Prophet (may Allah’s peace and blessings be upon him) quoted his Lord as saying, otherwise called a Qudsi or divine Hadīth.
    It establishes the speech of Allah Almighty, which occurs frequently in the noble Qur’an. This supports the view held by Ahl-us-Sunnah that Allah speaks audibly, for 'speech' entails reference to audible words.
    Allah Almighty is capable of injustice, yet He has forbidden it on Himself due to His perfect justice.
    Oppression is prohibited.
    Allah's laws and legislations are based on justice.
    Some of Allah's attributes are in the negative form, like injustice. When any attribute of Allah is negated, this is only to affirm the opposite. So, the negation of injustice means the affirmation of His complete and perfect justice.
    Allah Almighty can forbid whatever He wills for Himself, for the judgment belongs to Him, and He can also ordain whatever He wills upon Himself.
    The word 'self' is used to refer to the 'essence'. He said, “for Myself”, which means: His essence, Exalted be He.
    We are obligated to turn to our Lord whenever we are afflicted with any kind of affliction, for all creatures stand in need of Him.
    Allah is the Possessor of perfect justice, dominion, self-sufficiency, and benevolence towards His servants; and His servants should turn to Him for the fulfillment of their needs.
    Guidance should only be sought from Allah, Who said: “So seek guidance from Me and I will guide you.”
    All competent people are originally in error, which is ignorance and negligence of the truth.
    Any knowledge or guidance that people possess comes from Allah’s guidance and teaching.
    All goodness stems from Allah’s grace towards His servants, undeservedly, while all evil comes from people as a result of following their personal whims.
    A person does not create his action; rather, he and his action are created by Allah Almighty.
    No matter how numerous sins and misdeeds may be, Allah Almighty forgives them; but one needs to ask Him for forgiveness. Hence, He said: “So, ask forgiveness of Me, and I will forgive you.”
    If a person acts rightly, this is by Allah’s help, and the reward he receives is a favor from his 
    Lord; so all praise is due to Him.




    الفرنسية
    Abû Dharr al-Ghifârî (qu’Allah l’agrée) relate que le Prophète (sur lui la paix et le salut) a dit, concernant ce qu'il rapporte de son Seigneur, Exalté soit-Il, qu'Il à dit : « Ô Mes serviteurs ! Je Me suis interdit l’injustice et Je l’ai rendue interdite entre vous. Ne soyez donc pas injustes les uns envers les autres ! Ô Mes serviteurs ! Vous êtes tous égarés, sauf celui que Je guide. Demandez-Moi donc de vous guider, Je vous guiderai ! Ô Mes serviteurs ! Vous êtes tous affamés, sauf celui que Je nourris. Demandez-Moi donc de vous nourrir, Je vous nourrirai ! Ô Mes serviteurs ! Vous êtes tous nus, sauf celui que Je vêts. Demandez-Moi donc de vous vêtir, Je vous vêtirai ! Ô Mes serviteurs ! Vous commettez des fautes de nuit comme de jour, et c’est Moi qui pardonne tous les péchés. Demandez-Moi donc de vous pardonner, Je vous pardonnerai ! Ô Mes serviteurs ! Vous n’atteindrez jamais une capacité de nuisance au point de Me nuire et vous n’atteindrez jamais une capacité d’utilité au point de M’être utiles ! Ô Mes serviteurs ! Si le premier et le dernier d’entre vous, hommes et djinns confondus, avaient le cœur de l’homme le plus pieux parmi vous, cela n’ajouterait rien à Mon royaume ! Ô Mes serviteurs ! Si le premier et le dernier d’entre vous, hommes et djinns confondus, avaient le cœur de l’homme le plus pervers parmi vous, cela ne diminuerait en rien Mon royaume ! Ô Mes serviteurs ! Si le premier et le dernier d’entre vous, hommes et djinns confondus, se réunissaient dans une même plaine pour Me solliciter et que Je donnais à chacun satisfaction, cela ne diminuerait ce qu’il y a auprès de Moi que de ce qu’une aiguille plongée dans l’eau diminuerait de l’océan ! Ô Mes serviteurs ! Ce ne sont que vos œuvres que Je recense pour vous en vue de vous en rétribuer pleinement. Quiconque trouve un bien, qu’il loue Allah ! Quant à celui qui trouve autre chose, qu’il ne blâme que sa personne ! »    


    Authentique. - Rapporté par Muslim.
    الشرح
    Ce hadith est un hadith divin et contient des points importants au sujet des bases de la religion, de ses corollaires et de ses bonnes manières. Il nous enseigne qu’Allah, Gloire et Pureté à Lui, s’est interdit l’injustice par générosité et bienfaisance de Sa part envers Ses serviteurs et l'a aussi rendue interdite entre Ses créatures. De ce fait, personne ne doit opprimer qui que ce soit. De plus, toute l’humanité est certes égarée du chemin de la Vérité sauf ceux qu’Allah guide et à qui Il accorde la réussite. Et celui qui invoque Allah, Il lui donnera la réussite et le guidera. En effet, l’humanité est indigente et a besoin d'Allah. Celui qui l’invoquera verra sa requête exaucée et sera protégé. De même, tous les serviteurs commettent des fautes, de nuit comme de jour, et c’est Allah qui les dissimule et leur pardonne lorsqu’Il est invoqué. Quoi que les serviteurs disent ou fassent, ils ne pourront jamais nuire à Allah, ni Lui être utiles. S’ils avaient le cœur de l’homme le plus pieux parmi eux ou celui du plus pervers, leur piété n’ajouterait rien au royaume d’Allah et leur perversité ne diminuerait en rien Son royaume car ils sont faibles et indigents ayant besoin d'Allah, dépendants de Lui à chaque instant, à toute époque et en tout lieu. En outre, s’ils se réunissaient dans une même plaine pour Le solliciter et qu’Il donnait à chacun satisfaction, cela ne diminuerait en rien de ce qu’il y a auprès de Lui. Il en est ainsi parce que les trésors d’Allah sont vastes et immenses et rien ne les épuisera. Il est le Généreux de nuit comme de jour. Enfin, Il préserve toutes les œuvres des serviteurs et Il les recense qu’elles soient à leur avantage ou à leur détriment, pour ensuite les en rétribuer pleinement au Jour de la Résurrection. Par conséquent, quiconque trouve la récompense de ses œuvres bonnes, qu’il loue Allah de l’avoir aidé à Lui obéir ! Quant à celui qui trouve autre chose en guise de rétribution pour ses œuvres accomplies, qu’il ne blâme que sa personne dont l’âme, très incitatrice au mal, l’aura guidé à la perdition !    


    الإسبانية
    Desde Abu-Dhar al-Ghifari, que Al-láh esté complacido con él, del Mensajero de Al-láh y este de su Señor, Alabado y Exaltado sea, que dijo: “¡Oh siervos míos! Ciertamente me he prohibido la injusticia, y la he prohibido entre vosotros, así que no seáis injustos entre vosotros. ¡Oh siervos míos! Todos estáis extraviados, excepto quien yo guío, así que pedidme la guía y os guiaré. ¡Oh siervos míos! Todos estáis hambrientos, excepto quien Yo le haya dado de comer. Así que pedidme alimento y os alimentaré. ¡Oh siervos míos! Todos estáis desnudos salvo aquellos a quienes Yo he vestido. Así que pedidme vestimenta y Yo os vestiré. ¡Oh siervos míos! Cometéis errores de noche y de día, y Yo os los perdono todos ellos. Así que pedidme perdón y os perdonaré. ¡Oh siervos míos! No podréis llegar a perjudicarme ni a beneficiarme. ¡Oh siervos míos! Si el primero de vosotros y el último, de entre los humanos y los genios, fueran tan piadosos como el corazón de la persona más piadosa, eso no añadiría nada a Mi Poder. ¡Oh siervos míos! Si el primero de vosotros y el último, de entre los humanos y los genios, fueran tan corruptos como el corazón de la persona más corrupta, eso no disminuiría nada de Mi Poder. ¡Oh siervos míos! Si el primero de vosotros y el último, de entre los humanos y los genios, me pidiesen al mismo tiempo, Yo les otorgaré a cada uno su petición, sin que eso disminuya una pizca de todo cuanto poseo, o del mismo modo que disminuye el nivel del mar si se introduce una aguja en él y se saca. ¡Oh siervos míos! Ciertamente, son vuestras obras las que os computo, y luego os las recompenso. De este modo, quien encuentre el bien debe alabar a Al-láh por ello, y quien encuentre lo contrario, debe reprochárselo solamente a sí mismo”.    


    Hadiz auténtico (sahih). - Registrado por Muslim
    الشرح
    Este hadiz qudsí (Revela la Palabra de Al-láh) que recopila algunas de las fuentes más importantes de nuestra religión, sus valores y ética, nos informa de que Al-láh, Alabado y Exaltado sea, ha prohibido para Sí la injusticia como don y gracia hacia sus siervos. De este modo, ha prohibido la injusticia entre sus criaturas para que nadie la cometa contra su prójimo. También nos dice que todas las criaturas están extraviadas del sendero de Al-láh, excepto aquellos a quienes Él haya guiado. Quien le suplica a Al-láh, Él lo guiará hacia el camino recto. Que las criaturas son pobres y necesitadas de Al-láh. Él que se lo ruega a Al-láh, Él cubrirá sus necesidades y lo abastecerá. Asimismo, que los siervos cometen faltas de noche y de día, y Al-láh los resguarda y perdona sus faltas cuando el siervo le pide perdón. Que los siervos no podrán llegar a perjudicarme Al-láh ni a beneficiarle por mucho que lo intenten con sus palabras y actos. Aunque tuvieran el corazón de la persona más piadosa o más corrupta, eso no añadiría nada ni lo restará al Poder de Al-láh, ya que las criaturas son débiles ante Al-láh y necesitadas de Él en todo momento, situación y lugar. Aunque le pidiesen todos a la vez, Al-láh les otorgaría a cada uno su petición, sin que eso disminuya una pizca de todo cuanto posee, puesto que las alhacenas de Al-láh están siempre llenas y nada disminuye su caudal. Que Al-láh registra todos los actos de sus siervos y los computa, ya sean buenas o malas. El Día del Juicio recompensa por esos actos, de modo que, quien encuentre el bien, debería alabar a Al-láh por ello, y quien encuentre lo contrario, esto es el castigo por sus malos actos, debería reprochárselo solamente a sí mismo y a su espíritu que le llevó por la perdición”.    


    Hace parte de la sunnah algunos hadices que son palabra de Al-láh, es lo que narra el profeta -que la paz y las bendiciones de Al-láh sean con él- desde su Señor, y se llama hadiz qudusi o divino.
    Confirmar el habla de Al-láh- Enaltecido y Exaltado sea- y esto se nota en muchos sitios en el Sagrado Corán, y presenta una prueba que autentifica el dicho de la gente de la sunnah que el habla de Al-láh se realiza con una voz, porque el habla necesita ser escuchada.
    Al-láh -Enaltecido- con su poder inmenso puede usar la opresión pero ha prohibido esto para sí mismo gracias a Su justicia infinita.
    La prohibición de la injusticia.
    Las normas divinas se basan sobre la justicia.
    Entre los atributos de Al-láh encontramos unos negados como la negación de la injusticia, pero al tener un atributo negado se confirma su antónimo, por ejemplo ante la negación de la opresión se confirma la justicia infinita.
    Al-láh- Enaltecido y Exaltado sea- tiene el total derecho de prohibir para Él lo que quiere, y de permitir para Él lo que quiere.
    Usar la palabra alma (en árabe) para designar el yo, diciendo: "Ciertamente me he prohibido...", para designar a Al-láh- Enaltecido y Exaltado sea-
    La obligación de dirigirse hacia Al-láh en todas las circunstancias ya que todas las criaturas necesitan al Creador.
    La Justicia, el Reino, la Riqueza, la Beneficencia supremas de Al-láh hacia sus siervos, entonces los siervos deben dirigirse a Al-láh para pedir lo que necesitan.
    La buena guía solo se pide de Al-láh por el dicho: "así que pedidme la guía y os guiaré".
    Generalmente la gente solía ser extraviada: la perdición es ignorar de la verdad y no seguirla.
    Lo que alcanza la gente de conocimiento y de buena orientación, es gracias a la guía de Al-láh y a su enseñanza.
    Todo bien alcanzado por los siervos es un don de Al-láh, y todo mal proviene del hijo de Adán por seguir sus pasiones y sus deseos prohibidos.
    El siervo no crea sus hechos sino que él y sus hechos son creados por Al-láh- Enaltecido sea-.
    Hasta si los pecados y faltas son muchos, Al-láh- Enaltecido sea- perdona a su siervo, pero el siervo debe pedir el perdón, por esto Al-láh dice: "Así que pedidme perdón y os perdonaré".
    Quien obra el bien es gracias a la buena orientación de Al-láh, y su recompensa es un favor de Al-láh- alabado sea-.


    التركية
    Ebu Zer el-Gıfari –radıyallahu anh- Peygamber –sallallahu aleyhi ve sellem-’den rivayet etti. Peygamber –sallallahu aleyhi ve sellem- de Rabbinden rivayet etti. Allah Teâlâ şöyle buyurdu: «Ey Kullarım! Ben zulmü nefsime haram kıldım ve sizin aranızda da haram kıldım, - birbirinize zulmetmeyiniz. Ey kullarım! Hepiniz dalalettesiniz. Ancak benim hidayet ettiğim müstesna. Benden hidayet isteyiniz, sizi hidayet edeyim. Ey kullarım! Hepiniz açsınız, ancak benim yedirdiğim müstesna, benden yemek isteyiniz, sizi yedireyim. Ey kullarım! Hepiniz çıplaksınız, ancak benim giydirdiğim müstesna, benden elbise giydirmemi isteyiniz, sizi giydireyim. Ey kullarım! Siz gece gündüz hata ediyorsunuz ve ben günahların hepsini bağışlıyorum. Benden bağışlanma isteyiniz sizi bağışlayayım. Ey kullarım! Siz bana zarar veremezsiniz ve bana fayda veremezsiniz. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz içinizdeki en takva sahibi bir adamın kalbi üzere olsa bu benim mülküme hiç bir şey ilave etmez. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz, içinizden en fasık bir adamın kalbi üzere olsanız benim mülkümden bir şeyi eksiltmez. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz, yüksek bir yerde durup benden istese, herkese istediğini veririm de bu benim katımdakilerden ancak, iğnenin denize daldırıldığı zaman denizden eksiltiği kadar eksiltir. Ey kullarım! Yaptıklarınız ancak sizin amellerinizdir, ben onları yazıyorum, sonra size tam karşılığını vereceğim. Kim bir hayır bulursa Allah’a hamdetsin. Kim bundan başka bir şey bulursa, nefsinden başkasını kınamasın.»    


    [Sahih Hadis] - [Müslim rivayet etmiştir]
    الشرح
    Bu kapsamlı kutsi hadis bize dinin aslından, fer’î meselelerinden ve edeplerinden çok büyük faydalar vermektedir. Allah Subhanehu ve Teâlâ zulmü kullarına olan lütuf ve ihsanından dolayı kendi nefsine haram kılmıştır. Ayrıca zulmü kulları arasında da haram kılmıştır. Kimse kimseye zulüm edemez. Allah’ın hidayet etmesi ve muvaffak kılması hariç bütün kullar hak yoldan uzaktadır, dalalettedir. Kim Allah’tan isterse onu muvaffak kılar ve ona hidayet verir. Yaratılmışlar fakirdirler ve Allah’a muhtaçtırlar. Kim Allah’tan isterse ihtiyacını giderir ve ona yeter. Kullar gece ve gündüz günah işlemektedirler, kulların mağfiret istediği vakit Allah Teâlâ onları affeder ve önem vermeden geçer. Kullar sözleriyle ve fiilleriyle ne kadar çabalarlarsa çabalasınlar Allah’a fayda da, zarar da veremezler. Kullar eğer, en takva sahibi bir adamın ya da en fasık adamın kalbi üzere olsalar takvaları Allah’ın mülküne hiç bir şey ilave etmez. Fücurları de mülkünden hiçbir şey eksiltmez. Çünkü onlar Allah’a karşı fakirdirler, zayıftırlar. Her halde, her zaman ve yerde ona muhtaçtırlar. Hepsi bir yerde durup ondan istese, herkese istediğini verse bu onun katındakini noksanlaştırmaz. Çünkü hazineleri doludur, nafaka onu azaltmaz. Gece gündüz cömerttir. Allah kullarının lehine ve aleyhine olan bütün amellerini saklar ve onları sayar. Sonra da kıyamet günü onlara karşılığını verir. Kim amelinin karşılığını iyi bulursa Allah’a kendisine itaat etmek için muvaffak kıldığından dolayı hamd etsin, kim bundan başka bir şey bulursa, kötülüğü emreden ve onu hüsrana götüren nefsinden başkasını kınamasın.    


    الأوردية
    ابوذر غفاری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ اللہ تبارک وتعالیٰ سے روایت کرتے ہوئے بیان کرتے ہیں کہ اللہ نے فرمایا:”اے میرے بندو! میں نے ظلم کو اپنے اوپر حرام کر لیا ہے اور اسےتمہارے درمیان بھی حرام قرار دیا ہے۔ لہٰذا تم ایک دوسرے پر ظلم نہ کرو۔ اے میرے بندو! تم سب گمراہ ہو سوائے اس کے جسے میں ہدایت سے نواز دوں، پس تم مجھ ہی سے ہدایت مانگو میں تمہیں ہدایت دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب بھوکے ہو سوائے اس کے جسے میں کھلاؤں، پس تم مجھ ہی سے کھانا مانگو میں تمہیں کھانا دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب ننگے ہو سواۓ اس کے جسے میں لباس پہناؤں پس تم مجھ ہی سے لباس مانگو میں تمہیں لباس دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب دن رات گناہ کرتے ہو اور میں سارے گناہوں کو بخش دیتا ہوں پس تم مجھ ہی سے بخشش مانگو، میں تمہیں بخش دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب کی رسائی مجھے نقصان پہنچانے تک نہیں ہو سکتی کہ تم مجھے نقصان پہنچاؤ اور نہ تمہاری رسائی مجھے نفع پہنچانے تک ہو سکتی ہے کہ تم مجھے نفع پہنچاؤ۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات تم میں سب سے زیادہ متقی شخص کے دل جیسے ہوجائیں تو یہ میری سلطنت میں کچھ اضافہ نہ کرے گا۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات, تم میں سب سے زیادہ فاجر شخص کے دل جیسے ہوجائیں تو یہ میری سلطنت میں کچھ کمی نہ کرے گا۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ, اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات,ایک کھلے میدان میں کھڑے ہو جائیں اور سب مجھ سے سوال کریں اور میں ہر انسان کو اس کی طلب کردہ چیز دے دوں تو اس سے میرے خزانوں میں کوئی کمی نہیں ہوگی سوائے ایسے جیسے ایک سوئی سمندر میں ڈبونے کے بعد (پانی میں) کمی کرتی ہے۔ اے میرے بندو! یہ تمہارے اعمال ہیں کہ جنہیں میں شمار کر رہا ہوں پھر میں تمہیں ان کا پورا پورا بدلہ دوں گا تو جو شخص بھلائی پائے وہ اللہ کا شکر ادا کرے اور جو اس کے علاوہ پائے تو وہ اپنے ہی نفس کو ملامت کرے۔”    


    صحیح - اسے امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
    الشرح
    یہ حدیث قدسی جو دین کے اصول و فروع اور اس کے آداب کے سلسلے میں بہت سے عظیم فوائد پر مشتمل ہے، ہمیں یہ خبر دیتی ہے کہ اللہ تعالی نے از راہِ فضل اور اپنے بندوں پر احسان کرتے ہوئے اپنے آپ پر ظلم کو حرام کر دیا ہے اور اپنی مخلوق کے مابین بھی ظلم کو حرام ٹھہرایا ہے۔ لھٰذا کوئی کسی پر ظلم نہ کرے اور یہ کہ مخلوق سب کی سب گم گشتہ راہ حق ہے بجز اس کے کہ اللہ کی طرف سے ہدایت اور توفیق مل جائے۔ اور جو اللہ سے مانگتا ہے اسے اللہ تعالی ہدایت اور توفیق سے نواز دیتا ہے۔ اور یہ کہ تمام مخلوق اللہ کے سامنے فقیر اور اس کے محتاج ہیں۔ اور جو اللہ سے مانگتا ہے اللہ اس کی حاجت کو پورا کر دیتا ہے اور اسے کافی ہو جاتا ہے۔ اور یہ کہ انسان شب و روز گناہ کرتے ہیں اور اللہ ان کی ستر پوشی کرتا ہے اور جب بندہ مغفرت طلب کرتا ہے تو اللہ اس سے درگزر کردیتا ہے۔ وہ اپنے قول و فعل سے جتنی بھی کوشش کر لیں، اللہ کو نہ تو کچھ نقصان دے سکتے ہیں اور نہ کوئی نفع۔ اگر وہ سب کسی انتہائی متقی شخص کے دل کی مانند ہو جائیں یا کسی انتہائی بدکار شخص کی مانند ہو جائیں تو ان کا تقوی اللہ کی بادشاہت میں کچھ بھی اضافہ نہیں کر سکتا اور نہ ہی ان کی بدکاری اس کی بادشاہی میں کچھ کمی کر سکتی ہے۔ کیونکہ وہ کمزور، اللہ کے سامنے فقیر اور ہر حال، ہر وقت اور ہر جگہ اس کے محتاج ہیں۔ اگر وہ سب کسی ایک جگہ کھڑے ہو کر اللہ سے مانگیں اور اللہ ان میں سے ہر ایک کو اس کی مراد عطا کر دے تو اس سے اللہ کے پاس موجود خزانوں میں کچھ کمی نہین آئے گی۔ کیونکہ اللہ کے خزانے تو بھرے ہوئے ہیں جن میں خرچ کرنے سے کمی واقع نہیں ہوتی۔ وہ دن رات انہیں لٹاتا ہے۔ اور یہ کہ اللہ اپنے بندوں کے تمام اچھے برے اعمال کو محفوظ اور شمار کرتا جاتا ہے۔ پھر اللہ تعالیٰ قیامت کے دن انہیں ان کا پورا پورا بدلہ دے گا۔ جو اپنے عمل کا بدلہ اچھا پائے وہ اللہ کی طرف سے اس کی اطاعت کی توفیق ملنے پر اس کی حمد بیان کرے اور جسے اس کے عمل پر اس کے علاوہ کچھ اور جزا ملے تو وہ صرف اپنے نفس امارہ کو ہی ملامت کرے جس نے اسے گھاٹے میں ڈال دیا۔    


    سنت کی کچھ باتیں اللہ کا کلام ہوا کرتی ہیں. یہ وہ باتیں ہیں، جن کو اللہ کے نبیﷺ اپنے رب سے روایت کرتے ہیں۔ اس طرح کی حدیثوں کو حدیث قدسی یا حدیث الہی کہاجاتا ہے۔
    اللہ عزوجل کے لیے قول (کہنے) کا اثبات۔ قرآن کریم میں اس کی بہت سی مثالیں موجود ہیں۔ یہ اس بات کی دلیل ہے کہ اللہ آواز کے ساتھ بات کرتا ہے، کیوں کہ قول کا اطلاق اسی بات پر ہوتا ہے، جو سنی جا سکے۔
    اللہ تعالیٰ ظلم پرقدرت رکھتا ہے، لیکن اس نے اپنے کمال عدل کی وجہ سے اسے اپنی اوپر پر حرام کر رکھا ہے۔
    ظلم کرنا حرام ہے۔
    اللہ کے احکام عدل پر مبنی ہیں۔
    اللہ کی بعض صفات منفی ہوتی ہیں، جیسے ظلم۔ لیکن دراصل اللہ عزوجل کی جس صفت کی نفی ہوتی ہے، مقصد اس کی ضد کا اثبات ہوتا ہے۔ چنانچہ ظلم کی نفی میں دراصل ایسے کامل عدل کا اثبات پنہاں ہے، جو نقص سے خالی ہو۔
    اللہ عزوجل کو یہ اختیارحاصل ہے کہ جسے چاہے اپنے نفس پرحرام کرے، کیوںکہ فیصلے کا اختیار اسی کے پاس ہے۔ اسی طرح وہ جوچاہے اپنے نفس پر واجب کرے۔
    نفس کا اطلاق ذات پر کرنا۔ کیوں آپ کے فرمان "عَلَى نَفْسِيْ" میں نفس سے مراد خود اللہ عزوجل کی ذات ہے۔
    انسان کے ساتھ پیش آنے والی تمام مصیبتوں میں اللہ تعالیٰ کی طرف متوجہ ہونا واجب ہے، کیوںکہ تمام مخلوق اسی کی محتاج ہے۔
    اللہ تعالیٰ مکمل انصاف کرنے والا، بادشاہت کا مالک، سب سے بے نیاز اوراپنے بندوں کے ساتھ احسان کرنے والا ہے۔ لہذا بندوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنی تمام ضرورتوں کی تکمیل کے لیے اللہ کی طرف متوجہ ہوں۔
    اللہ تعالیٰ کے فرمان : "فَاستَهدُونِي أَهدِكُم". یعنی تم مجھ سے ہدایت طلب کرو، میں تمہیں ہدایت دوں گا، کے مطابق ہدایت صرف اسی سے طلب کی جائے گی۔
    مکلف بندوں میں اصل گمراہی ہے۔ گمراہی نام ہے حق سے جہالت اوراس پر عمل نہ کرنے کا۔
    بندوں کو جوعلم اور ہدایت حاصل ہوتی ہے، وہ اللہ کی رہنمائی اور اس کے سکھلانے کے سبب ہے۔
    بندوں کو پہنچنے والی تمام بھلائیاں بغیر کسی استحقاق کے اللہ تعالیٰ کے فضل وکرم کی وجہ سے ہیں۔ جب کہ تمام برائیاں ابن آدم کی طرف سے اپنی نفسانی خواہش کی پیروی کرنے کی وجہ سے ہیں۔
    بندہ اپنے نفس کے فعل کا خالق نہیں ہے، بلکہ وہ اور اس کا فعل اللہ تعالیٰ کی مخلوق ہیں۔
    گناہ و معاصی خواہ کتنے ہی بڑھ جائیں، اللہ ان کو بخش دے گا، لیکن ضرورت ہے کہ انسان استغفارکرے۔ اسی لیے فرمایا: "فَاسْتَغْفِرُوْنِيْ أَغْفِرْ لَكُمْ".’’مجھ سے مغفرت طلب کرو، میں تمہیں بخش دوں گا۔‘‘
    جس نے نیکی کا کام کیا، تو اس کا یہ کام اللہ کی توفیق سے ہے اور اس کا ثواب درصل اللہ کا فضل ہے۔ لہذا ساری تعریف اللہ کی ہے۔


    _________________

    *******************************************

    حديث قدسي - تحريم الظلم  08310

    حديث قدسي - تحريم الظلم  17904110
    alsaidilawyer
    alsaidilawyer
    مدير المنتدى
    مدير المنتدى


    الجنس : ذكر
    الابراج : الدلو
    عدد المساهمات : 4032
    نقاط : 80999
    السٌّمعَة : 2684
    تاريخ التسجيل : 01/03/2010
    العمر : 53
    الموقع : الجمهورية اليمنية - محافظة إب

    حديث قدسي - تحريم الظلم  Empty رد: حديث قدسي - تحريم الظلم

    مُساهمة من طرف alsaidilawyer الجمعة 3 فبراير 2023 - 13:38


    التركية
    Ebu Zer el-Gıfari –radıyallahu anh- Peygamber –sallallahu aleyhi ve sellem-’den rivayet etti. Peygamber –sallallahu aleyhi ve sellem- de Rabbinden rivayet etti. Allah Teâlâ şöyle buyurdu: «Ey Kullarım! Ben zulmü nefsime haram kıldım ve sizin aranızda da haram kıldım, - birbirinize zulmetmeyiniz. Ey kullarım! Hepiniz dalalettesiniz. Ancak benim hidayet ettiğim müstesna. Benden hidayet isteyiniz, sizi hidayet edeyim. Ey kullarım! Hepiniz açsınız, ancak benim yedirdiğim müstesna, benden yemek isteyiniz, sizi yedireyim. Ey kullarım! Hepiniz çıplaksınız, ancak benim giydirdiğim müstesna, benden elbise giydirmemi isteyiniz, sizi giydireyim. Ey kullarım! Siz gece gündüz hata ediyorsunuz ve ben günahların hepsini bağışlıyorum. Benden bağışlanma isteyiniz sizi bağışlayayım. Ey kullarım! Siz bana zarar veremezsiniz ve bana fayda veremezsiniz. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz içinizdeki en takva sahibi bir adamın kalbi üzere olsa bu benim mülküme hiç bir şey ilave etmez. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz, içinizden en fasık bir adamın kalbi üzere olsanız benim mülkümden bir şeyi eksiltmez. Ey kullarım! Eğer sizden evvelkiler, son olarak gelenleriz, insanlarınız, cinleriniz, yüksek bir yerde durup benden istese, herkese istediğini veririm de bu benim katımdakilerden ancak, iğnenin denize daldırıldığı zaman denizden eksiltiği kadar eksiltir. Ey kullarım! Yaptıklarınız ancak sizin amellerinizdir, ben onları yazıyorum, sonra size tam karşılığını vereceğim. Kim bir hayır bulursa Allah’a hamdetsin. Kim bundan başka bir şey bulursa, nefsinden başkasını kınamasın.»    


    [Sahih Hadis] - [Müslim rivayet etmiştir]
    الشرح
    Bu kapsamlı kutsi hadis bize dinin aslından, fer’î meselelerinden ve edeplerinden çok büyük faydalar vermektedir. Allah Subhanehu ve Teâlâ zulmü kullarına olan lütuf ve ihsanından dolayı kendi nefsine haram kılmıştır. Ayrıca zulmü kulları arasında da haram kılmıştır. Kimse kimseye zulüm edemez. Allah’ın hidayet etmesi ve muvaffak kılması hariç bütün kullar hak yoldan uzaktadır, dalalettedir. Kim Allah’tan isterse onu muvaffak kılar ve ona hidayet verir. Yaratılmışlar fakirdirler ve Allah’a muhtaçtırlar. Kim Allah’tan isterse ihtiyacını giderir ve ona yeter. Kullar gece ve gündüz günah işlemektedirler, kulların mağfiret istediği vakit Allah Teâlâ onları affeder ve önem vermeden geçer. Kullar sözleriyle ve fiilleriyle ne kadar çabalarlarsa çabalasınlar Allah’a fayda da, zarar da veremezler. Kullar eğer, en takva sahibi bir adamın ya da en fasık adamın kalbi üzere olsalar takvaları Allah’ın mülküne hiç bir şey ilave etmez. Fücurları de mülkünden hiçbir şey eksiltmez. Çünkü onlar Allah’a karşı fakirdirler, zayıftırlar. Her halde, her zaman ve yerde ona muhtaçtırlar. Hepsi bir yerde durup ondan istese, herkese istediğini verse bu onun katındakini noksanlaştırmaz. Çünkü hazineleri doludur, nafaka onu azaltmaz. Gece gündüz cömerttir. Allah kullarının lehine ve aleyhine olan bütün amellerini saklar ve onları sayar. Sonra da kıyamet günü onlara karşılığını verir. Kim amelinin karşılığını iyi bulursa Allah’a kendisine itaat etmek için muvaffak kıldığından dolayı hamd etsin, kim bundan başka bir şey bulursa, kötülüğü emreden ve onu hüsrana götüren nefsinden başkasını kınamasın.    


    الأوردية
    ابوذر غفاری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ اللہ تبارک وتعالیٰ سے روایت کرتے ہوئے بیان کرتے ہیں کہ اللہ نے فرمایا:”اے میرے بندو! میں نے ظلم کو اپنے اوپر حرام کر لیا ہے اور اسےتمہارے درمیان بھی حرام قرار دیا ہے۔ لہٰذا تم ایک دوسرے پر ظلم نہ کرو۔ اے میرے بندو! تم سب گمراہ ہو سوائے اس کے جسے میں ہدایت سے نواز دوں، پس تم مجھ ہی سے ہدایت مانگو میں تمہیں ہدایت دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب بھوکے ہو سوائے اس کے جسے میں کھلاؤں، پس تم مجھ ہی سے کھانا مانگو میں تمہیں کھانا دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب ننگے ہو سواۓ اس کے جسے میں لباس پہناؤں پس تم مجھ ہی سے لباس مانگو میں تمہیں لباس دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب دن رات گناہ کرتے ہو اور میں سارے گناہوں کو بخش دیتا ہوں پس تم مجھ ہی سے بخشش مانگو، میں تمہیں بخش دوں گا۔ اے میرے بندو! تم سب کی رسائی مجھے نقصان پہنچانے تک نہیں ہو سکتی کہ تم مجھے نقصان پہنچاؤ اور نہ تمہاری رسائی مجھے نفع پہنچانے تک ہو سکتی ہے کہ تم مجھے نفع پہنچاؤ۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات تم میں سب سے زیادہ متقی شخص کے دل جیسے ہوجائیں تو یہ میری سلطنت میں کچھ اضافہ نہ کرے گا۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات, تم میں سب سے زیادہ فاجر شخص کے دل جیسے ہوجائیں تو یہ میری سلطنت میں کچھ کمی نہ کرے گا۔ اے میرے بندو! اگر تمھارے پہلے کے لوگ اور تمھارے آخر کے لوگ, اور تمھارے انسان اور تمھارے جنّات,ایک کھلے میدان میں کھڑے ہو جائیں اور سب مجھ سے سوال کریں اور میں ہر انسان کو اس کی طلب کردہ چیز دے دوں تو اس سے میرے خزانوں میں کوئی کمی نہیں ہوگی سوائے ایسے جیسے ایک سوئی سمندر میں ڈبونے کے بعد (پانی میں) کمی کرتی ہے۔ اے میرے بندو! یہ تمہارے اعمال ہیں کہ جنہیں میں شمار کر رہا ہوں پھر میں تمہیں ان کا پورا پورا بدلہ دوں گا تو جو شخص بھلائی پائے وہ اللہ کا شکر ادا کرے اور جو اس کے علاوہ پائے تو وہ اپنے ہی نفس کو ملامت کرے۔”    


    صحیح - اسے امام مسلم نے روایت کیا ہے۔
    الشرح
    یہ حدیث قدسی جو دین کے اصول و فروع اور اس کے آداب کے سلسلے میں بہت سے عظیم فوائد پر مشتمل ہے، ہمیں یہ خبر دیتی ہے کہ اللہ تعالی نے از راہِ فضل اور اپنے بندوں پر احسان کرتے ہوئے اپنے آپ پر ظلم کو حرام کر دیا ہے اور اپنی مخلوق کے مابین بھی ظلم کو حرام ٹھہرایا ہے۔ لھٰذا کوئی کسی پر ظلم نہ کرے اور یہ کہ مخلوق سب کی سب گم گشتہ راہ حق ہے بجز اس کے کہ اللہ کی طرف سے ہدایت اور توفیق مل جائے۔ اور جو اللہ سے مانگتا ہے اسے اللہ تعالی ہدایت اور توفیق سے نواز دیتا ہے۔ اور یہ کہ تمام مخلوق اللہ کے سامنے فقیر اور اس کے محتاج ہیں۔ اور جو اللہ سے مانگتا ہے اللہ اس کی حاجت کو پورا کر دیتا ہے اور اسے کافی ہو جاتا ہے۔ اور یہ کہ انسان شب و روز گناہ کرتے ہیں اور اللہ ان کی ستر پوشی کرتا ہے اور جب بندہ مغفرت طلب کرتا ہے تو اللہ اس سے درگزر کردیتا ہے۔ وہ اپنے قول و فعل سے جتنی بھی کوشش کر لیں، اللہ کو نہ تو کچھ نقصان دے سکتے ہیں اور نہ کوئی نفع۔ اگر وہ سب کسی انتہائی متقی شخص کے دل کی مانند ہو جائیں یا کسی انتہائی بدکار شخص کی مانند ہو جائیں تو ان کا تقوی اللہ کی بادشاہت میں کچھ بھی اضافہ نہیں کر سکتا اور نہ ہی ان کی بدکاری اس کی بادشاہی میں کچھ کمی کر سکتی ہے۔ کیونکہ وہ کمزور، اللہ کے سامنے فقیر اور ہر حال، ہر وقت اور ہر جگہ اس کے محتاج ہیں۔ اگر وہ سب کسی ایک جگہ کھڑے ہو کر اللہ سے مانگیں اور اللہ ان میں سے ہر ایک کو اس کی مراد عطا کر دے تو اس سے اللہ کے پاس موجود خزانوں میں کچھ کمی نہین آئے گی۔ کیونکہ اللہ کے خزانے تو بھرے ہوئے ہیں جن میں خرچ کرنے سے کمی واقع نہیں ہوتی۔ وہ دن رات انہیں لٹاتا ہے۔ اور یہ کہ اللہ اپنے بندوں کے تمام اچھے برے اعمال کو محفوظ اور شمار کرتا جاتا ہے۔ پھر اللہ تعالیٰ قیامت کے دن انہیں ان کا پورا پورا بدلہ دے گا۔ جو اپنے عمل کا بدلہ اچھا پائے وہ اللہ کی طرف سے اس کی اطاعت کی توفیق ملنے پر اس کی حمد بیان کرے اور جسے اس کے عمل پر اس کے علاوہ کچھ اور جزا ملے تو وہ صرف اپنے نفس امارہ کو ہی ملامت کرے جس نے اسے گھاٹے میں ڈال دیا۔    


    سنت کی کچھ باتیں اللہ کا کلام ہوا کرتی ہیں. یہ وہ باتیں ہیں، جن کو اللہ کے نبیﷺ اپنے رب سے روایت کرتے ہیں۔ اس طرح کی حدیثوں کو حدیث قدسی یا حدیث الہی کہاجاتا ہے۔
    اللہ عزوجل کے لیے قول (کہنے) کا اثبات۔ قرآن کریم میں اس کی بہت سی مثالیں موجود ہیں۔ یہ اس بات کی دلیل ہے کہ اللہ آواز کے ساتھ بات کرتا ہے، کیوں کہ قول کا اطلاق اسی بات پر ہوتا ہے، جو سنی جا سکے۔
    اللہ تعالیٰ ظلم پرقدرت رکھتا ہے، لیکن اس نے اپنے کمال عدل کی وجہ سے اسے اپنی اوپر پر حرام کر رکھا ہے۔
    ظلم کرنا حرام ہے۔
    اللہ کے احکام عدل پر مبنی ہیں۔
    اللہ کی بعض صفات منفی ہوتی ہیں، جیسے ظلم۔ لیکن دراصل اللہ عزوجل کی جس صفت کی نفی ہوتی ہے، مقصد اس کی ضد کا اثبات ہوتا ہے۔ چنانچہ ظلم کی نفی میں دراصل ایسے کامل عدل کا اثبات پنہاں ہے، جو نقص سے خالی ہو۔
    اللہ عزوجل کو یہ اختیارحاصل ہے کہ جسے چاہے اپنے نفس پرحرام کرے، کیوںکہ فیصلے کا اختیار اسی کے پاس ہے۔ اسی طرح وہ جوچاہے اپنے نفس پر واجب کرے۔
    نفس کا اطلاق ذات پر کرنا۔ کیوں آپ کے فرمان "عَلَى نَفْسِيْ" میں نفس سے مراد خود اللہ عزوجل کی ذات ہے۔
    انسان کے ساتھ پیش آنے والی تمام مصیبتوں میں اللہ تعالیٰ کی طرف متوجہ ہونا واجب ہے، کیوںکہ تمام مخلوق اسی کی محتاج ہے۔
    اللہ تعالیٰ مکمل انصاف کرنے والا، بادشاہت کا مالک، سب سے بے نیاز اوراپنے بندوں کے ساتھ احسان کرنے والا ہے۔ لہذا بندوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنی تمام ضرورتوں کی تکمیل کے لیے اللہ کی طرف متوجہ ہوں۔
    اللہ تعالیٰ کے فرمان : "فَاستَهدُونِي أَهدِكُم". یعنی تم مجھ سے ہدایت طلب کرو، میں تمہیں ہدایت دوں گا، کے مطابق ہدایت صرف اسی سے طلب کی جائے گی۔
    مکلف بندوں میں اصل گمراہی ہے۔ گمراہی نام ہے حق سے جہالت اوراس پر عمل نہ کرنے کا۔
    بندوں کو جوعلم اور ہدایت حاصل ہوتی ہے، وہ اللہ کی رہنمائی اور اس کے سکھلانے کے سبب ہے۔
    بندوں کو پہنچنے والی تمام بھلائیاں بغیر کسی استحقاق کے اللہ تعالیٰ کے فضل وکرم کی وجہ سے ہیں۔ جب کہ تمام برائیاں ابن آدم کی طرف سے اپنی نفسانی خواہش کی پیروی کرنے کی وجہ سے ہیں۔
    بندہ اپنے نفس کے فعل کا خالق نہیں ہے، بلکہ وہ اور اس کا فعل اللہ تعالیٰ کی مخلوق ہیں۔
    گناہ و معاصی خواہ کتنے ہی بڑھ جائیں، اللہ ان کو بخش دے گا، لیکن ضرورت ہے کہ انسان استغفارکرے۔ اسی لیے فرمایا: "فَاسْتَغْفِرُوْنِيْ أَغْفِرْ لَكُمْ".’’مجھ سے مغفرت طلب کرو، میں تمہیں بخش دوں گا۔‘‘
    جس نے نیکی کا کام کیا، تو اس کا یہ کام اللہ کی توفیق سے ہے اور اس کا ثواب درصل اللہ کا فضل ہے۔ لہذا ساری تعریف اللہ کی ہے۔




    الإندونيسية
    Abu Żarr Al-Gifāriy -raḍiyallāhu 'anhu- meriwayatkan dari Nabi -ṣallallāhu 'alaihi wa sallam- tentang apa yang beliau riwayatkan dari Tuhannya: "Wahai hamba-hamba-Ku! Sesungguhnya Aku telah mengharamkan kezaliman atas diri-Ku dan Aku menjadikannya haram atas kamu sekalian; maka janganlah kamu sekalian saling menzalimi. Wahai hamba-hamba-Ku! Kamu sekalian itu sesat, kecuali yang Aku beri petunjuk; maka mintalah petunjuk kepada-Ku, niscaya Aku akan memberikannya kepada kalian. Wahai hamba-hamba-Ku! Kamu sekalian itu lapar, kecuali yang Aku beri makan; maka mintalah makan kepada-Ku, niscaya Aku akan memberikannya kepada kalian. Wahai hamba-hamba-Ku! Kamu sekalian itu telanjang, kecuali yang Aku beri pakaian; maka mintalah pakaian kepada-Ku, niscaya Aku akan memberikannya kepada kalian. Wahai hamba-hamba-Ku! Sesungguhnya kalian itu selalu melakukan kesalahan di waktu siang dan malam, sedangkan Aku mengampuni semua dosa; maka mintalah ampun kepada-Ku, niscaya Aku mengampuni kalian. Wahai hamba-hamba-Ku! Sesungguhnya kamu sekalian tidak akan bisa menimpakan mudarat kepada-Ku sehingga dapat membahayakan-Ku, dan kamu sekalian tidak akan bisa memberi manfaat kepada-Ku sehingga bermanfaat bagi-Ku. Wahai hamba-hamba-Ku! Jika kamu sekalian yang awal hingga yang akhir, baik dari bangsa manusia maupun dari bangsa jin, bertakwa seperti orang yang paling bertakwa di antara kamu sekalian, maka hal itu tidak akan menambah sedikit pun pada kekuasaan-Ku. Wahai hamba-hamba-Ku! Jika kamu sekalian yang awal hingga yang akhir, baik dari bangsa manusia maupun bangsa jin, berkumpul di satu tempat yang luas dan memohon kepada-Ku, kemudian Aku mengabulkan permohonan mereka, maka hal itu tidak akan mengurangi kekayaan yang Aku miliki, melainkan seperti jarum yang dicelupkan ke laut dan diangkat lagi. Wahai hamba-hamba-Ku! Sesungguhnya Aku mencatat amal perbuatanmu dan Aku membalasnya, maka siapa yang mendapat kebaikan, maka hendaklah memuji Allah, dan siapa yang mendapat selain itu, maka hendaklah ia tidak mencela kecuali dirinya sendiri."    


    Hadis sahih - Diriwayatkan oleh Muslim
    الشرح
    Hadis qudsi ini yang mencakup berbagai faedah besar dalam pokok-pokok agama, cabang-cabangnya, dan adab-adabnya, menunjukkan kepada kita bahwa Allah -Subḥānahu wa Ta'ālā- telah mengharamkan kezaliman kepada diri-Nya sebagai keutamaan dan kebajikan dari-Nya untuk para hamba-Nya. Dia menjadikan kezaliman haram di antara para makhluk-Nya, karena itu seseorang tidak boleh menzalimi orang lain. Dan sesungguhnya manusia itu seluruhnya tersesat dari jalan kebenaran, kecuali dengan adanya hidayah dan taufik dari Allah; siapa yang memohon pada Allah, niscaya Dia memberinya taufik dan hidayah itu. Sesungguhnya makhluk itu fakir kepada Allah dan membutuhkan-Nya; siapa yang memohon kepada Allah, niscaya Allah memenuhi kebutuhannya dan mencukupinya. Sesungguhnya mereka itu berbuat dosa di malam dan siang hari, sedangkan Allah -Ta'ālā- menutupi dan memberikan ampunan ketika seorang hamba memohon ampunan. Sesungguhnya mereka itu tidak akan mampu -meskipun telah berusaha dengan ucapan dan perbuatan- untuk membahayakan Allah atau memberikan manfaat untuk-Nya dengan sesuatu. Sesungguhnya mereka itu meskipun semuanya berada dalam kondisi hati orang yang paling bertakwa atau dalam kondisi hati orang yang paling durhaka, maka ketakwaan mereka tidak akan menambah kekuasaan Allah dan kedurhakaan mereka tidak akan mengurangi sesuatu pun dari kekuasaan Allah, karena mereka itu lemah, fakir kepada Allah, dan membutuhkan-Nya di setiap keadaan, masa, dan tempat. Seandainya mereka itu berada di satu tempat untuk memohon kepada Allah lalu Dia memberi apa yang diminta oleh setiap orang, tentunya hal itu tidak akan mengurangi sedikit pun apa yang ada di sisi Allah. Sebab, perbendaharaan Allah -Subḥānahu wa Ta'ālā- itu penuh (melimpah), tidak akan berkurang dengan adanya nafkah sepanjang malam dan siang. Sesungguhnya Allah menjaga dan menghitung semua amalan para hamba, yang baik maupun yang buruk, lalu Dia akan membalas amalan mereka pada hari Kiamat. Siapa yang mendapatkan balasan amalnya berupa kebaikan, hendaknya ia memuji Allah atas taufik-Nya untuk menaati-Nya, dan siapa yang mendapatkan balasan amalnya bukan kebaikan, hendaknya ia tidak mencela kecuali nafsunya yang menyeret dirinya pada keburukan dan menggiringnya pada kerugian.    


    Sebagian Sunnah merupakan firman Allah, yaitu yang diriwayatkan oleh Nabi -ṣallallāhu 'alaihi wa sallam- dari Rabb beliau, dan dinamakan dengan hadis qudsi atau hadis ilahi.
    Menetapkan adanya ucapan bagi Allah -'Azza wa Jalla-, dan ini banyak terdapat dalam Al-Qur`ān. Sekaligus ini adalah dalil bagi pendapat Ahli Sunnah yang menyatakan bahwa kalam Allah berupa suara, karena istilah ucapan tidak digunakan kecuali pada yang didengar.
    Allah kuasa berbuat zalim, tetapi Allah mengharamkannya bagi Diri-Nya karena kesempurnaan sifat adil-Nya.
    Pengharaman kezaliman.
    Syariat-syariat Allah dibangun di atas keadilan.
    Sebagian di antara sifat Allah adalah sifat yang dinafikan seperti menafikan kezaliman. Akan tetapi, tidak ada penafian dalam sifat-sifat Allah -'Azza wa Jalla- kecuali untuk menetapkan kebalikannya. Sehingga menafikan kezaliman artinya menetapkan keadilan sempurna yang tidak mengandung cacat.
    Allah -'Azza wa Jalla- boleh mengharamkan bagi diri-Nya apa yang Dia kehendaki karena hukum kembali kepada-Nya. Sebagaimana Allah boleh mewajibkan atas diri-Nya apa yang Dia kehendaki.
    Boleh menggunakan istilah nafs (jiwa) dengan makna zat (diri); sebagaimana dalam firman-Nya, "'alā nafsī." Maksudnya adalah Zat-Nya.
    Wajib kembali kepada Allah dalam semua hal yang dialami oleh manusia karena semua makhluk butuh kepada-Nya.
    Kesempurnaan sifat adil Allah, juga kekuasaan-Nya, ketidakbutuhan-Nya, dan kebaikan-Nya kepada hamba-hamba-Nya. Sebab itu, wajib bagi para hamba untuk menghadap kepada Allah dalam menunaikan hajat mereka.
    Hidayah tidak diminta kecuali dari Allah; sebagaimana firman-Nya, "Maka mintalah hidayah kepada-Ku, pasti kalian Aku beri hidayah."
    Hukum asal pada manusia adalah ketersesatan; yaitu tidak mengetahui kebenaran dan tidak mengamalkannya.
    Ilmu dan hidayah yang didapatkan pada hamba adalah dengan petunjuk dan pengajaran dari Allah.
    Kebaikan seluruhnya berasal dari karunia Allah -Ta'ālā- untuk hamba-hamba-Nya tanpa penuntutan. Sedangkan keburukan seluruhnya berasal dari manusia karena memperturutkan hawa nafsu.
    Hamba tidak menciptakan sendiri perbuatannya, tetapi dia dan perbuatannya adalah ciptaan Allah -Ta'ālā-.
    Dosa dan kesalahan sekalipun banyak maka Allah -Ta'ālā- akan tetap bisa mengampuninya, tetapi manusia wajib untuk tetap memohon ampunan. Oleh karena itu, Allah berfirman, "Maka memohon ampunlah kepada-Ku, pasti kalian Aku berikan ampunan."
    Siapa yang berbuat baik maka itu adalah dengan adanya taufik dari Allah, dan pahalanya adalah karunia dari Allah; maka hanya milik-Nya segala pujian.


    _________________

    *******************************************

    حديث قدسي - تحريم الظلم  08310

    حديث قدسي - تحريم الظلم  17904110

      الوقت/التاريخ الآن هو الخميس 18 يوليو 2024 - 13:49